آنکھوں میں ستارے تو کئی شام سے اترے

آنکھوں میں ستارے تو کئی شام سے اترے
پر دل کی اداسی ، نہ در و بام سے اترے

کچھ رنگ تو ابھرے تری گل پیرہنی کا
کچھ زنگ ، تو آئینہ ایام سے اترے

ہوتے رہے دل ،لمحہ بہ لمحہ ،تہہ و بالا
وہ زینہ بہ زینہ ، بڑے آرام سے اترے

آنکھوں میں ستارے تو کئی شام سے اترے
پر دل کی اداسی ، نہ در و بام سے اترے

کچھ رنگ تو ابھرے تری گل پیرہنی کا
کچھ زنگ ، تو آئینہ ایام سے اترے

ہوتے رہے دل ،لمحہ بہ لمحہ ،تہہ و بالا
وہ زینہ بہ زینہ ، بڑے آرام سے اترے

For more update about all types of poetry visit: urdupoetryy.com

Leave a Comment